رائٹس واچ | 31 مئی 2023

0
74

غیرت کے نام پرلڑکی اور لڑکے کو بے دردی سے قتل کر دیا گیا

مانسہرہ میں دو نوعمروں، ایک لڑکی اور ایک لڑکے کو نام نہاد “غیرت ” کے نتیجے میں قتل کر دیا گیا۔

واقعہ گل شہزاد کی رہائش گاہ پر پیش آیا جہاں 15 سالہ لڑکی اور لڑکا ایک کمرے میں اکٹھے پائے گئے۔ یہ منظر دیکھ کر مشتعل ہو کر محمد شعیب نامی خاندان کے فرد نے ان پر لاٹھیوں سے حملہ کر دیا جس کے نتیجے میں وہ موقع پر ہی جاں بحق ہو گئے۔

پولیس نے لڑکی کے چچا زاد بھائی شعیب کو گرفتار کر کے تفتیش شروع کر دی ہے۔ لاشوں کو تدفین کے لیے ان کے اہل خانہ کے حوالے کر دیا گیا ہے۔

بھائی نے ‘غیرت کے نام پر قتل’ کر دیا

خیرپور میں “غیرت کے نام پر قتل” پر مبنی ایک فعل میں ایک بھائی نے المناک طور پر اپنی بہن کی جان لے لی۔ ملزم مسعود چنہ نے اپنی 21 سالہ بہن محترمہ عذرا کو گولی مار کر قتل کر دیا جس کی عمران چنہ سے شادی ہوئی تھی۔

اس گھناؤنے فعل کے پیچھے مبینہ طور پر عذرا کا ناجائز تعلقات میں ملوث ہونا تھا۔ ملزم مسعود چنا نے خود کو پولیس کے حوالے کر دیا، ایک پستول بطور ثبوت پیش کیا اور “غیرت کے نام پر قتل” کے جرم کا اعتراف کیا۔

نوعمر لڑکی سے زیادتی کرنے والا شخص گرفتار

نوعمر لڑکی سے زیادتی کے الزام میں ایک شخص کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔ یہ واقعہ اس وقت پیش آیا جب نویں جماعت کی طالبہ لڑکی کو اس کے سابق ہم جماعت نے رینالہ شہر کے ایک سرکاری اسکول سے رابطہ کیا۔

ہم جماعت نے اسے شاپنگ پر جانے کے لیے راضی کیا اور وہ رینالہ سٹی بازار چلے گئے۔ تاہم صدر بازار میں مرکزی ملزم اور ساتھی لڑکی کو اغوا کر کے اعوان ٹاؤن لے گئے اور زیادتی کی۔ لڑکی کی مدد کے لیے چیخنے کی آواز سن کر عینی شاہدین نے پولیس ہیلپ لائن پر کال کی۔ لڑکی کے والد بھی جائے وقوعہ پر پہنچے تاہم ملزمان فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔

رینالہ سٹی پولیس نے سابق ہم جماعت سمیت تین افراد کے خلاف مقدمہ درج کر لیا۔ بنیادی ملزم کو تیزی سے گرفتار کر لیا گیا۔

کراچی میں ایک شخص نے بیوی کو بھاری پتھر سے قتل کر دیا

اورنگی محلے میں شوہر نے گھر پر پتھر مار کر بیوی کو قتل کر دیا۔ واقعہ اس وقت پیش آیا جب شوہر خلیل احمد جو کہ دماغی بیماری رکھتا ہے، نے اپنی بیوی زیبا بی بی کو بے دردی سے مارا اور اس کے سر پر پتھر مار دیا۔

بلوچستان سے تعلق رکھنے والی 6 بچوں کی ماں 35 سالہ متاثرہ کو عباسی شہید اسپتال میں مردہ قرار دے دیا گیا۔ اہل خانہ نے شوہر کو ایک کمرے میں بند کر کے پولیس کو اطلاع دی۔ قتل کے پیچھے محرکات تاحال زیر تفتیش ہیں۔

خاندان کا دعویٰ ہے کہ احمد کی بگڑتی ہوئی ذہنی حالت مافوق الفطرت قوتوں سے متاثر ہو سکتی ہے، لیکن وہ انصاف کو یقینی بنانے کے لیے قانونی کارروائی کی ضرورت پر زور دیتے ہیں۔

بچے کے قتل کی سزائے موت کالعدم قرار 

لاہور ہائی کورٹ کے راولپنڈی بینچ نے 9 سالہ بچی کے اغوا، زیادتی اور قتل کے مجرم جوڑے کی سزائے موت اور سات سال قید کی سزا کو کالعدم قرار دے دیا۔

عدالت نے اپنے فیصلے میں تکنیکی وجوہات بتاتے ہوئے دونوں کو اڈیالہ سینٹرل جیل سے فوری رہا کرنے کا حکم دیا۔ یہ جرم جھنڈا چیچی سول لائنز پولیس اسٹیشن کے دائرہ اختیار میں پیش آیا۔

ملزم شوہر اور بیوی کو متاثرہ کے والد کی شکایت کی بنیاد پر گرفتار کیا گیا تھا، اور انہیں اکتوبر 2021 میں سزا سنائی گئی تھی۔ حالیہ فیصلہ ڈی این اے، پوسٹ مارٹم معائنے اور میڈیکل رپورٹس سے متاثر تھا، جس کی وجہ سے ان کی رہائی ہوئی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here