نارووال میں 65 سالہ شخص پر زیادتی کا الزام

نارووال میں ایک خاتون نے الزام لگایا ہے کہ ایک 65 سالہ شخص نے اسے کھانا کھلانے کے بعد اس کے ساتھ زیادتی کی۔ اس کا دعویٰ ہے کہ مشتبہ شخص نے بعد میں اسے بلیک میل کیا، اس کا سامان چرایا، اور اسے حملے کی ویڈیو بھیجی۔

ایف آئی آر درج کرائی گئی تاہم ملزم ضمانت قبل از گرفتاری پر ہے۔ لواحقین نے اپنے بچوں کے ساتھ مقامی پریس کلب میں احتجاج کرتے ہوئے پولیس پر الزام لگایا کہ وہ ملزم کی حمایت کر رہی ہے اور ایک بااثر شخص نے انہیں انصاف کے حصول کے لیے باہر کرنے پر مجبور کیا۔ ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر رانا طاہر رحمان کے مطابق کیس کی مکمل تفتیش کی جا رہی ہے۔

گوجرانوالہ میں سات سالہ بھانجی کو زیادتی کے بعد قتل کرنے والا شخص گرفتار

گوجرانوالہ کے تھانہ فیروز والا کی حدود میں سات سالہ بچی کو اس کے چچا نے مبینہ زیادتی کے بعد قتل کر دیا۔ بریحہ دو دن سے لاپتہ تھی۔ پولیس نے مقدمہ درج کرنے کے بعد تفتیش شروع کر دی اور مقتول لڑکی کے چچا اعجاز کو گرفتار کر لیا جو اسی گھر میں رہائش پذیر تھا۔

دوران تفتیش ملزم اعجاز نے اعتراف کیا کہ وہ لڑکی کو فیکٹری میں لے گیا اور زیادتی کی۔ اس نے یہ بھی کہا کہ اس نے لڑکی کو قتل کر کے اس کی لاش کو نالے میں پھینک دیا۔

بیٹی کے  ساتھ زیادتی اور قتل کیس میں باپ کا انصاف کی تلاش

اس کی 12 سالہ بیٹی کو کورنگی کے گھر میں زیادتی اور قتل کیے جانے کے ایک سال بعد، کراچی کا ایک مزدور پولیس کی جانب سے ‘اے کلاس’ رپورٹ درج کرنے کے باوجود، مشتبہ افراد کی شناخت کرنے میں ناکام رہنے کے باوجود انصاف کی تلاش میں ہے۔ بغیر کسی لیڈ کے، غمزدہ والد پولیس کی پوچھ گچھ اور اپنے مالی چیلنجوں کے درمیان کیس کی پیروی کرنے کے لیے جدوجہد کر رہا ہے۔ اگرچہ ایک جج نے سوال کیا کہ ایک نابالغ کس طرح خودکشی کر سکتا ہے، لیکن تحقیقات تعطل کا شکار ہیں۔

باپ نے عزم کیا کہ جب تک اس کے قاتلوں کو انصاف کے کٹہرے میں نہیں لایا جاتا اپنی بیٹی کی آخری رسومات میں آگے نہیں بڑھیں گے۔ ہر موڑ پر دیواروں سے ٹکرانے کے باوجود، وہ اس کے لیے لڑتے رہنے کے لیے پرعزم ہے، چاہے اس میں کتنا ہی وقت لگے یا کتنی ہی ناممکن مشکلات ہوں۔ اس دل شکستہ والدین کے لیے، بندش تلاش کرنا اور ذمہ داروں کو جوابدہ ٹھہرانا ہی آگے بڑھنے کا واحد راستہ ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here