گینگ ریپ کا شکار کراچی اسپتال میں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسی

اجتماعی زیادتی کا نشانہ بننے والی اور سول اسپتال کراچی میں زیر علاج بچی انتقال کر گئی۔ قمبر شہدادکوٹ کے علاقے میرانکوٹ سے تعلق رکھنے والی 13 سالہ لڑکی کو تقریباً ایک ماہ قبل پانچ افراد نے اغوا کر لیا تھا۔

اسے نامعلوم مقام پر لے جایا گیا جہاں اسے سڑک کے کنارے چھوڑنے سے پہلے وحشیانہ اجتماعی عصمت دری اور تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔ تکلیف دہ آزمائش میں مبتلا نوجوان لڑکی کو ابتدائی طور پر چانڈکا ہسپتال لاڑکانہ منتقل کیا گیا اور بعد ازاں تشویشناک حالت کے پیش نظر سول ہسپتال کراچی ریفر کر دیا گیا۔ طبی پیشہ ور افراد کی سرشار کوششوں کے باوجود وہ زندہ نہ رہ سکی۔

سپریم کورٹ نے دو  نابالغ لڑکیوں کو ماں کی تحویل میں دے دیا

چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں سپریم کورٹ نے دو نابالغ لڑکیوں کو ان کی والدہ کے حوالے کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ باپ کو فیصلے پر عمل کرنا ہوگا ورنہ توہین عدالت کا سامنا کرنا پڑے گا۔

والد کی درخواست کے باوجود، عدالت نے والدین کی جاری تناؤ اور بچوں کے مستقبل پر اس کے اثرات کے بارے میں خدشات کا حوالہ دیتے ہوئے شرعی اصولوں کی بنیاد پر ماں کی تحویل کو برقرار رکھا۔ عدالت نے والد کو ملنے کے حقوق کی بھی اجازت دی، اسے ہر اتوار کو صبح 10 بجے سے شام 5 بجے تک اپنی بیٹیوں سے ملنے کی اجازت دی، بالآخر دونوں والدین کی رضامندی سے کیس کو حل کیا۔

مظاہرین کا لکی مروت میں انٹرنیٹ کی بحالی کا مطالبہ

لکی مروت کے شہر تتر خیل میں مظاہرین نے منگل کو ریلی نکالی اور انٹرنیٹ سروس بحال کرنے کا مطالبہ کیا۔ نوجوانوں کے ایک گروپ نے بلدیاتی اراکین کے ساتھ مل کر بنوں ڈیرہ اسماعیل خان انڈس ہائی وے پر احتجاجی مظاہرہ کیا۔ انہوں نے پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے اور اپنے مطالبات کو اجاگر کرنے کے لیے نعرے لگا رہے تھے۔

مظاہرے کے دوران، مقررین نے انٹرنیٹ کی معطلی کے منفی اثرات پر زور دیا، خاص طور پر نوجوانوں اور کاروباری برادری سمیت قصبے کے رہائشیوں پر۔ ایک مظاہرین نے نشاندہی کی کہ شٹ ڈاؤن نے روایتی اور آن لائن کاروبار کو متاثر کیا ہے، جس سے طلباء کے لیے تعلیمی اداروں میں داخلے کے لیے آن لائن درخواست دینا مشکل ہو گیا ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here