۷  دسمبر ۲۰۲۳

تحریر : اعتزاز ابرہیم


لاہور

لاہور میں گھر کے کچن میں آگ لگنے سے گھریلو ملازمہ اورگھر کی مالکن دونوں جھلس کر زخمی ہوگئیں۔ ملازمہ کی حالت تشویشناک ہے اور اس وقت وہ میو ہسپتال میں زیر علاج ہے۔

صدر بازار کینٹ کے علاقے بکر محلہ میں واقع گھر کے کچن میں آگ لگنے کا واقع پیش آیا تو 40 سالہ گھریلو ملازمہ شبنم اور مالکن شازیہ  جھلس کر زخمی ہو گیئں۔

لیکن وائس پی کے سے گفتگو کرتے ہوئے گھریلو ملازمہ شبنم کی بہن ردا اسلم نے مالکن شازیہ پر جان بوجھ کر آگ لگانے کا الزام عائد کر دیا

میری بہن شبنم کم تنخواہ کی وجہ سے کام چھوڑنا چاہ رہی تھی تو شازیہ نے شبنم کو آواز دے کر کچن میں بلایا اور جلتے ہوئے پٹرول کی بوتل اس پر پھینک دی۔

جبکہ شازیہ نے شبنم کے خاندان کے الزام کی تردید کرتے ہوئے وائس پی کے سے کہا کہ ایسا کچھ نہیں ہو۔

 شبنم میرے یاں 11 سال سے ملازمہ تھی ۔ کچھ عرصہ پہلے گھر میں پینٹ کا کام کروایا تھا۔ اور اس وجہ سے گھر میں پٹرول کی بوتل موجود تھی۔ جو شبنم نے گھر کا کام کرتے ہوے غلطی سے پانی کی بوتلوں میں مکس کر دی۔ جب وہ کچن میں اپنے بچے کے لئے برتن میں پانی گرم کررہی تھی اس نے بوتل کو گرم پانی کے برتن میں ڈال دیا جس سے آگ بھڑک اٹھی۔ اوردونوں اور شبنم زخمی ہوگئیں ۔

واقع کے وقت قریب موجود ہونے والے محلہ دار، رئیس احمد، جنہوں نے آگ بجھانے میں مدد کی، کہنے لگے کہ

میں اپنے کام میں مصروف تھا اور اچانک آگ لگنے کا شوراٹھا۔ شور سنتے ہی میں گھر سے باہر نکلا تو دیکھا کہ شبنم بی بی گھر کے باہر تھیں اور ان کے جسم کا نچلا حصہ جل رہا تھا- میں نے انہیں بچایا اور گھر میں لگی آگ بجھائی

ملازمہ شبنم اس وقت لاہور کے میو ہسپتال میں زیرعلاج ہیں۔ میڈیکل رپورٹ کے مطابق ان کے جسم کا نچلا حصہ 30 فیصد تک جل چکاہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here