٢ مارچ ۲۰۲۴

تحریر : اعتزاز ابراہیم


لاہور

انتخابات میں مبینہ دھاندلی اور بے ضابطگیوں کے خلاف پاکستان تحریک انصاف کی کال پر جب کارکنان لاہور کے جی پی او چوک پر پہنچے تو پولیس نے لاٹھی چارج کر کہ بیس کے قریب کارکنان اور رہنماؤں کو گرفتار کر لیا ۔پی ٹی آئی رہنما شہزادہ فاروق ، حافظ ذیشان رشید، ایڈووکیٹ یوسف وائیں گرفتار ہونے والے رہنماؤں میں شامل تھے ۔

گررفتار ہونے والے پی ٹی آئی رہنما کا کہنا تھا کہ

’’مجھے ابھی دو دن پہلے رہا کیا گیا ۔ ہم پر امن تھے پولیس نے ہماری ریلی پر لاٹھی چارج کیا ۔‘‘

احتجاج میں شریک گرفتار ہونے والے رہنما حافظ ذیشان رشید کا کہنا تھا کہ

’’ہم انتخابات میں دھاندلی کے خلاف احتجاج کرنے کے لئے جی پی او پر آئے تھے پولیس نے اپنی ظلمانہ روش کو برقرار رکھتے ہوئے کریک ڈاون کیا۔‘‘

پاکستان تحریک اںصاف کے احتجاج کے پیش نظر لاہور لبرٹی چوک ، اور زمان پارک کے باہر بھی پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی ۔

پاکستان تحریک انصاف کے کارکنان کی گرفتاریوں پر موقف دیتے ہوئے ایس پی ڈولفن پولیس زوہیب رانجھا کا کہنا تھا

’’راستہ بلاک کر کہ قانون ہاتھ میں لینے والے کارکنوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔کسی بھی شخص کو قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دے گے۔‘‘

پاکستان تحریک انصاف کے سنیئر رہنما سلمان اکرم راجا کا وائس پی کے سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ایسا انگریز کے دور میں بھی نہیں ہوا کہ لوگوں کو احتجاج بھی نہیں کرنے دیا جائے ۔احتجاج کرنا بنیادی حق ہے۔ عوام نے 8 فروری کو اپنا فیصلہ سنا دیا تھا۔ عوام کے مینڈیٹ پر ڈاکہ ڈالا گیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here