٦ اپریل ۲۰۲۴

تحریر : اعتزاز ابراہیم


لاہور

چائلڈ پروٹیکشن اینڈ ویلفیئر بیورو کی لاہور کے علاقے کاہنہ میں کاروائی غیر رجسٹرڈ این جی او کی تحویل سے 32 بچوں کو بازیاب کروایاگیا۔غیررجسٹرڈ این جی او ’’ گھرانہ یتیم خانہ ‘‘ میں غیر قانونی طور پر بچوں کو دوکمروں میں انتہائی نامناسب حالات میں رکھا گیا تھا۔بازیاب کروائے گئے بچوں میں 14 لڑکے اور 18 لڑکیاں شامل ہیں، بچوں کی عمریں 3 سال سے 14 سال کے درمیان ہیں۔این جی او گھرانہ کی انچارج نگینہ قمر کے خلاف ایف آئی آر درج کر کہ گرفتار کر لیا گیا ہے۔

کاروائی میں حصہ لینے والے چائلڈ چائلڈ پروٹیکشن اینڈ ویلفیئر بیورو کے ٹیم ممبر اسد اللہ خان کا وائس پی کے سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ

’’ چائلڈ پروٹیکشن بیورو کو کاہنہ میں غیر رجسٹرڈ این جی او کے بارے میں اطلاع ملی۔ چائلڈ پروٹیکشن بیورو کی ٹیم نے معائنہ کرنے پر بچوں کی حالت کو غیر تسلی بخش اور رہائشی سہولیات کو انتہائی ناقص پایا۔ این جی او گھرانہ کی انچارج کے خلاف ایف آئی آر کے اندراج کے بعدگرفتار کروا دیا گیا ہے ۔‘‘

ایف آئی آر کاپی
ایف آئی آر کاپی

چیئرپرسن چائلڈ پروٹیکشن اینڈ ویلفیئر بیورو سارہ احمد کا کاروائی پر جاری پریس ریلیز میں کہنا تھا کہ

’’ بازیاب کروائے گئے تمام بچوں کو چائلڈ پروٹیکشن بیورو میں بہترین سہولیات فراہم کے ساتھ رکھا جائے گا۔ بازیاب کروائے گئے بچوں کے والدین اور لواحقین کو تلاش کیا جائے گا۔ ‘‘

چیئرپرسن چائلڈ پروٹیکشن اینڈ ویلفیئر بیورو سارہ احمد کا میڈیا کو دئے گئے انٹرویو میں کہنا تھا کہ

’’بازیاب ہونے والے بچوں کے میڈیکل ٹیسٹ کرائے گئے جس سے معلوم ہوا کہ ان کے ساتھ جنسی زیادتی نہیں کی گئی۔ یہ بچے بھیک مانگنے میں بھی شامل نہیں تھے۔‘‘

چائلڈ پروٹیکشن بیورو کی افسر رابعہ نے اپنی ٹیم کی سربراہی میں کاروائی کی جس میں رضوان حیدر، احتشام ارشد اور اسد اللہ خان شامل تھے ۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here