۲ جون ۲۰۲۴

تحریر : اعتزاز ابراہیم


لاہور

عاصمہ جہانگیر لیگل ایڈ سیل اور یو کے پاکستان سیریس کرائم اینڈ لا انفورسمنٹ پروگرام کے اشتراک سے یکم جولائی کو لاہور کے نجی ہوٹل میں اینٹی ریپ ایکٹ کے حوالے سے آگاہی سیمینار کا انعقاد کیا گیا ۔سیمینار میں سابقہ ممبر قومی اسمبلی مہناز اکبر عزیز ، ڈی آئی جی انوسٹیگیشن لاہور ذیشان اصغر ، ایڈیشنل پراسیکیوٹر جنرل پنجاب رائے اختر حسین اور سینئر ایڈوکیٹ شبیر حسین نے بطور مہمان خصوصی شرکت کی اور پینل ٹاک گفتگو میں شریک ہوئے ۔

سیمینار میں وکلاء برادری ، سول سوسائٹی ، صحافتی کمیونٹی اور پنجاب پولیس کے اہلکاروں نے کثیر تعداد میں شرکت کی ۔

مہناز اکبر عزیز کا وائس پی کے سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ اینٹی ریپ ایکٹ اور اس کے رولز موجود ہیں لیکن اس کے مؤثر استعمال کے لیے سیاسی لوگوں کو اس میں کردار ادا کرنا ہوگا۔

ایڈیشنل پراسیکیوٹر جنرل پنجاب رائے اختر حسین کا اس موقع پر کہنا تھا کہ اج کے سیمنار میں ریپ کیسز کے ٹرائل میں پیش آنے والے تکنیکی مسائل اور ان کے ممکنہ حل پر بات ہوئی ۔سیمینار میں شریک پولیس اہلکار مصباح حفیظ کا اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہنا تھا کہ سیمینار سے ریپ جیسے سنگین جرائم کی انوسٹیگیشن کرنے کے طریقوں کے بارے میں آگاہی ملی.

سیمینار میں شرکاء کو آگاہ کیا گیا کہ ریپ کے مجرمان کے ڈیٹا پر مبنی ایک ” سیکس افینڈر رجسٹر” تیار کر لیا گیا ہے جس کو جلد لانچ کر دیا جائے گا جو کہ ریپ جیسے اور دیگر جرائم کی روک تھام کیلئے استعمال کیا جاسکے گا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here