رائٹس واچ | 9 مارچ 2023

0
92

اسلام قبول کرنے والی ہندو لڑکی کو والد کے ساتھ جانے کی اجازت، کراچی کورٹ کے قوانین

کراچی کی عدالت نے اسلام قبول کرکے شادی کرنے والی ہندو لڑکی کو تحویل میں دے دیا۔ رمیلا عرف سائرہ بی بی نامی لڑکی کو اس کی عمر کے بارے میں غیر یقینی صورتحال کے باعث شیلٹر ہوم میں رکھا گیا تھا، جس کی عمر میڈیکل بورڈ نے 15 سال کے لگ بھگ بتائی۔

لڑکی کے والد نے دلیل دی کہ وہ نابالغ ہے اور اسے اس کے فطری سرپرست کے طور پر اس کے حوالے کیا جانا چاہیے، جب کہ اس کے شوہر کے وکیل نے دعویٰ کیا کہ وہ سوئی جیوری ہے اور اسے اپنی قسمت کا فیصلہ کرنے کی اجازت ہونی چاہیے۔

لڑکی نے شروع میں اغوا ہونے کی تردید کی اور کہا کہ اس نے مذہب تبدیل کیا اور اپنی مرضی سے شادی کی لیکن بعد میں اس نے اپنے والدین کے ساتھ جانے کی خواہش ظاہر کی۔

عدالت نے شیلٹر ہوم کو قانونی طریقہ کار مکمل ہونے کے بعد والد کے حوالے کرنے کا حکم دیا اور روپے لڑکی کی حفاظت کے لیے 10 لاکھ کے ضمانتی مچلکے جمع کرائے گئے۔

پشاور ہائی کورٹ نے قتل کیس میں خاتون کی عمر قید کی سزا برقرار رکھی

پشاور ہائی کورٹ نے رابعہ کی اپیل مسترد کر دی ہے، جسے پشاور کے ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج نے اپنی سوتیلی بہو کو گلا کاٹ کر قتل کرنے کے جرم میں سزا سنائی تھی۔

عدالت نے فیصلہ دیا کہ ٹرائل کورٹ کا فیصلہ معقول اور شواہد کی مناسب تشخیص پر مبنی تھا۔ مقدمہ میں شکایت کنندہ متوفی خاتون کا باپ تھا، جس کا کہنا تھا کہ رابعہ نے زیورات کے تنازع پر اپنی بیٹی کو قتل کیا اور خود کو زخمی کر دیا تاکہ واقعہ کو ڈکیتی کے طور پر دکھایا جا سکے۔

رابعہ کو عمر قید اور 500,000 روپے جرمانے کی سزا سنائی گئی جو مقتول کے قانونی ورثاء کو ادا کرنا ہوگی۔

باپ کا  بیٹی کے مبینہ قتل پر انصاف کا مطالبہ

والد نے سسرال والوں کے ہاتھوں مبینہ طور پر قتل ہونے والی بیٹی کے لیے انصاف کا مطالبہ کیا اور خود کشی کے لیے پیش ہونے والی صاحبہ پروین کے والد محمد انور نے اپنی بیٹی کے سسرالیوں کے ہاتھوں مبینہ قتل کے لیے انصاف کے لیے سیشن کورٹ سے رجوع کیا، جس نے اسے خود کشی کے طور پر پیش کیا۔ خودکشی

انور نے اپنی درخواست میں کہا کہ اس کی بیٹی کا اکثر سسرال والوں سے جھگڑا رہتا تھا اور انہوں نے 6 فروری کو اسے قتل کر کے اسے خودکشی کا جھوٹا دعویٰ کیا۔ انور نے بوڑھے ہونے کی وجہ سے عدالت سے ملزم کے خلاف کارروائی کی استدعا کی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here